Tim-Tim-Rishtay-silent relationship-by-asim-mehmood

ٹِم ٹِم رِشتے (Silent Relationship)

ٹِم ٹِم رِشتے ( خاموش محبتیں)

حصہ دوم
اگر ھم حقیقی رشتوں میں سے اپنے احساسات کو نکال کر چپکانا چاہیں تو ہمارے دماغ میں سب سے پہلے ہماری امی، ابو کی تصویر بنتی ہے..ہمارے احساسات ہماری محبتیں ان کے لئے زور پکڑنے لگتی ہیں ہم وہ فیلینگز ایکسپوز ہی نہیں کر پاتے جن پر ان کا حق ہوتا. .
میں آپ سب کے سامنے ہمیشہ ایک ہنس مُکھ مذاقی موڈ میں ہی نظر آیا ہمیشہ اپنی زندگی کی وہ باتیں آپ سب کے سامنے رکھیں جن باتوں نے آپ کو قہقہے پر مجبور کیا… یہ سب بتانے میں میری اپنی خوشی ہوتی تھی خوشی ہوتی ہے اور خوشی ہوتی رہے گی کہ میرے سے وابسطہ جو زندگیاں وہ کسی طور بس مسکرا سکیں اسے آپ میرا مقصد بھی کہہ سکتے ہیں.
میری حقیقت اس کے بالکل برعکس ہے. اپنی فیملی میں ایک چپ چاپ سا ، غصے والا، سمجھدار سا بندہ مانا جاتا ہوں.
میں نے کبھی کہیں پڑھا تھا کہ والدین کو دیکھ کر حج جتنا ثواب ملتا ہے مجھے نہیں معلوم کہ یہ کتنا سچ ہے اور کیا یہ واقعی سچ ہے میں نے بس یہ بات اپنی میموری میں فکس کر لی اور کئی سالوں سے اس پر پابند بھی ہوں.
Tim-Tim-Rishtay-silent relationship-by-asim-mehmood-1
صبح کو میری آنکھ میری امی جی کی آواز سے کُھلتی ہے وہ نیچے سے آواز دیکر مجھے بلا رہی ہوتی ہیں. اگر کبھی میں پہلے جاگ بھی جاؤں تو اس آواز کے انتظار میں لیٹا رہتا ہوں. جیسے ہی دو سے تین آوازیں میرے کانوں تک پہنچتی ہیں تو میں مسکرا دیتا ہوں کیونکہ مجھے پتہ ہوتا ہے کہ اب کیا ہونے والا ہے اور ایسے ہی ہوتا ہے اس سے اگلی آواز میرے ابو جی کی ہوتی ہے.
یہ آوازیں صبح صبح میرے لئے انرجی کا کام کرتی ہیں میں محسوس کرپاتا ہوں ان آوازوں کے پیچھے کی محبت اور فکر کو. میں دس مہینے ان آوازوں کو بلاناغہ محسوس کیا کرتا تھا اور وہ دس مہینے کبھی بھی مجھے خوش نہ کر سکے بیماروں جیسا ہی رہا اس انرجی کے بغیر.
میں اگلے ہی چند لمحوں میں نیچے ہوتا ہوں اور میری نظریں خودبخود کھوجتی ہوئی امی جی کے چہرے تک جا پہنچتی ہیں جو کچن میں ناشتہ بنانے میں مصروف ہوتی ہیں اور مجھے دیکھکر امی جی مسکرا کر پوچھ رہی ہوتی ہیں ” ہاں جی، چوہدری صاحب ناشتہ کیا پسند فرمائیں گے ” اس سے اگلی نظر ابو جی پر ہوتی ہے جو ٹی وی لاؤنج میں بیٹھے آل ریڈی مجھے دیکھ رہے ہوتے ہیں.
میرے دل میں امی ابو جیسے رشتے کے لئے لا محدود محبت پنہاں ہے لیکن میں کبھی چاہ کر بھی ایکسپوز نہیں کر پایا جتنی مرضی کوشش کر لوں مگر نہیں کر پایا پتہ نہیں کیوں.
میرے دوسرے بھائی سب بیٹوں کی طرح امی جی ابو جی کے گلے بھی ملتے رہتے ہیں ان کے ساتھ لاڈیاں بھی کر رہے ہوتے ہیں مگر میں شائد اچھا بیٹا نہیں ہوں جو انہیں بتا نہیں پاتا کہ مجھے بھی ان سے بہت پیار ہے مجھے بھی ان کو گلے لگانا ہے مگر مجھے یہ لمحات عید کی عید ہی میسر ہوتے ہیں اور یہ میری اپنی زیادتی ہے خود کے ساتھ.
گھر کا چونکہ بڑا بیٹا ہوں تو لاڈ بھی بہت اٹھوائے من مانیاں بھی خوب کیں جیسے جیسے بڑا ہوتا گیا اپنی جگہ دوسروں کو دیتا گیا. .
میری ابو جی سے بہت ہی کم بنتی ہے. کیونکہ وہ اپنے ابو جی کو فالو کرتے ہیں جبکہ میں اپنے ابو جی کو فالو نہیں کرتا میرا بہت سی باتوں میں اختلاف بھی رہا ہے. بہت سے ایسے مشورے جو میں ان کے مزاج کے خلاف دے دیا کرتا تھا وہ اکثر ان پر عمل نہ کرکے نقصان بھی اٹھاتے آئے اور بہت دفعہ یہ بھی کہتے سنا کہ عاصم صحیح کہتا تھا ایسے کر لیتےتو ٹھیک تھا..بس یہی بات مجھے بہت خوش کر دیتی کہ بعد میں ہی سہی مگر مجھے کہیں نہ کہیں صحیح تو کہہ جاتے میرے دل میں ان کا احترام کئی گنا زیادہ بڑھ جاتا دل چاہتا کہ اٹھوں اور گلے لگ جاؤں مگر…….. نہیں کر سکا ایسا کبھی.
فر ابو جی کبھی کبھی میری بات مان بھی لیا کرتے میرا مان بڑھانے کے لئے کامیابی کی صورت میں وہ میٹھی میٹھی بعزتی کر کے میرے کلیجے کو ٹھنڈ ڈالا کرتے. .
میں نے اپنے ابو جی سے جینا سیکھا ہے. غصہ مجھے وراثت میں ملا ہے. غصے پر برداشت مجھے میرے ابو جی نے سکھائی. . بہت بہت مشکل حالات میں صبر اور اندر کی پریشانی کو ظاہر کرنا بھی مجھے ابو جی نے ہی سکھایا.
اب میں اپنے بھتیجے عبدلہادی کو انگلی پکڑا کر بازار لیکر جاؤں تو ایک انجانا سا فخر محسوس کرتا ہوں اپنے اندر کیونکہ کبھی میں بھی ایسے ہی ابو جی کی انگلی پکڑ کر بازار جایا کرتا تھا.
جب کبھی میرا بہت زیادہ دل کرے ابو جی کا پیار لینے کو تو بس بہانے بہانے سے انہیں دیکھتا رہتا ہوں فر بھی طلب کم نہ ہو تو جان بوجھ کر کوئی ایسی بات کر دیتا ہوں یا حرکت کردیتا ہوں جس سے بعزتی شروع ہوجاتی ہے اور میرا کلیجہ فیلنگ سکون والا معاملہ ہو جاتا ہے. مثلاً کبھی وہ کوئی بات کر رہے ہوں تو جان بوجھ کر چپ رہتا ہوں وہ دو تین دفعہ دھراتے تو ہلکا سا سر اٹھا کر ہاں جی کہہ کر فر چپ ہوجاتا ہوں باقی کا چپ وہ فر اپنے طریقے سے کروا دیتے ہیں. . یا فر ایک دفعہ گھر میں جنریٹر چینج کیا گیا تو جنریٹر کو اوپر چھت پر رکھ دیا گیا. مجھے اس کے شور سے چڑ ہوتی اور ایک دن میں اسے رگڑا ہی لگا گیا. گھر سے دوست کی بہن کی شادی پر استعمال ہونے گیا وہاں سےکہاں گیا آج تک اس قومی راز کا پتہ نہ چل سکا. . اس بات کو کئی سال گزر گئے مگر میں نے پچھلی سوموار کو بھی اس پر بعزتی کروائی تھی.
گڑ والے چاول میرے پسندیدہ چاول ہیں ان کے ساتھ میں سالن سے آلو نکال کر لازمی کھایا کرتا تھا.. ابو جی دیکھتے تو کہتے ایک تو چوہدری صاحب کے ٹیسٹ کا پتہ نہیں چلتا کس کے ساتھ کیا کیا کھانے لگ جاتا ہے. . اب ماشاء اللہ ابو جی کو بھی کبھی کبھی گڑ والے چاولوں کے ساتھ آلو کھاتے دیکھتا ہوں اور مزید تڑکا یہ کہہ کر لگا دیتا ہوں آپ خود کونسا ٹھیک طرح سے کھاتے آپ کا بیٹا ہوں آپ کی عادتیں ہی مجھ میں.
یہ سن کر ابو جی سوچی پڑ جاتے کہ یہ تو اسے دیکھکر کھانا شروع کیا میں نے. فیر وہ آلو سائیڈ پر رکھکر میری دوسری عادتوں کا ذکر چھیڑ بیٹھتے کہ تم یہ کرتے تم وہ کرتے تم ایسے تم ویسے…. اور میں بس اس بعزتی کو اپنے اندر کی گہرائیوں تک اتارتا جاتا جب وہ ٹھنڈے ہوتے میں فر کوئی نئی بات کر دیتا اور فیر فیلنگ سکون… ایک دفعہ تو اتنی کلیجے کو ٹھنڈ پڑی کہ ابو جی نے کسی بات پر لائیو بعزتی کی بعد میں کال کر کے فر اسی بات پر بعزتی کی جو مجھے بہت زیادہ محسوس ہوئی اور فر مجھے ان کے موبائل کو رگڑا لگا کر کلیجے کو ٹھنڈ ڈالنی پڑی.
میرے ابو جی میرا غرور ہیں میری پہچان ہیں. جب میں نے پہلی دفعہ اپنا پورا نام ” عاصم محمود اختر ” لکھ کر دکھایا تھا تو وہ کتنی دیر مجھے چومتے رہے تھے اور نام پر ہاتھ پھیرتے اپنی زوجہ کو بار بار کہتے تھے کہ عاصم نے میرا نام لکھیا ایننوں اگلے سال اچھے اسکول داخل کروا دینا… پتہ نہیں وہ نام لکھنے کی خوشی میں اعلان تھا. یا اپنا نام اپنے بیٹے کے ہاتھوں لکھا دیکھکر جذباتی فیصلہ تھا یا میری ہینڈ رائٹنگ بہت گندی تھی.
جو بھی تھا اس لمحے ان کے چہرے پر جو خوشی جو محبت تھی وہ آج تک میرے ذہن میں نقش .
میرے لئے یہ رشتہ بہت بڑا خزانہ ہے جسے کھونے کا سوچ کرہی میں مرجھا جاتا ہوں ساکت ہوجاتا ہوں.
میں کبھی اپنے بھائیوں کی طرح پیار نہیں لے پایا یا کر پایا..میں نے ہمیشہ ایسے ہی بعزتی کرواکر چھیڑخانی کرکے اس پیار کی بوندیں اپنے اندر اتاریں. ..
میرا یوں پیار لینا پسند آیا…؟؟؟
جاری ہے
کیا آپ نے ٹِم ٹِم رشتے (Imaging Relations) حصہ اؤل پڑھا ہے؟
50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں